This is default featured slide 1 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.This theme is Bloggerized by Lasantha Bandara - Premiumbloggertemplates.com.

This is default featured slide 2 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.This theme is Bloggerized by Lasantha Bandara - Premiumbloggertemplates.com.

This is default featured slide 3 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.This theme is Bloggerized by Lasantha Bandara - Premiumbloggertemplates.com.

This is default featured slide 4 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.This theme is Bloggerized by Lasantha Bandara - Premiumbloggertemplates.com.

This is default featured slide 5 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.This theme is Bloggerized by Lasantha Bandara - Premiumbloggertemplates.com.

ہفتہ، 19 ستمبر، 2020

Episode 35 part 2 Nafrat Mohabbat novel last

 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se

 Amara Mughal

Episode 35

Episode 35 part 2 Nafrat Mohabbat  novel last



( last episode)Part 2


Maot

Mohabat kab gi tadfeen ky liya isy kuch hosh na taa or hota bi kesy wo apnyy  hwas mein hi tee kudh  mein itni himat bi no tee kay uth ko akhri nazar as sitmgar  ko daik laiti  balaj ki maot is pr pahar bn kr toti tee as pas kay logon mein kai baten hori teen laikn wo sab sy bay bara apni duniya mein gum teen. 

AYAT

nasir ki bahari awaz ny isy sochon ki mehwar sy hosh ki dunya mein dakela q k wo sar utati To kiya wo tadfeen kar kay achuky tay wo log tarp kar rota dil ik or martba kar laya ya soch kar hi or sar jukay wo apna rona zabat karny lagy. 
kash wo isy apny lafzon say na tori.

Read More : Episode


  AYAT GAR CHALO

 Abb ki bar pir nasir nay ayat ko mukatab kiya.nai bhai mein yhan rahon gi.nasir agay say koch bolny hi laga taa zoya nay isary say nasir ko chup krwa diya.HAFTY BADAjj ik hafta guzar  chuka  taa ayat hanoz sikanadar wala mein rany lagi tee gar waly sab is say milny aty magar  isko gari cipi lagi tee or bi q na is ki pori duniya andery  mein dob chuki tee kiya ni ta iski chup mein gam taklif ki intha aziat o karb. 


BALAJ KI YAD

Zoom mein koi dakil howa ta ayat kay dil ny sidat say dowa ki tee kash ya balaj hoo or boly ayat mein agya hoon ayat nay jesy hi opar nazar otai is ki anken pati ki pati ra gi ik pal kw isy pori dniya rukti hoi lagi waqt  maheny sal jesy taam cuky tay sans js qadar roki tee wo kobsorat  chera bri tara surk howa or jatkay say sans kenchi wo apny donon hat moon pay rakti bay yaqeni  say daikny lagi wo har na mumkin bat par yaqen kr laiti lakin abi joo  howa is par yaqeen krna na mahal ta wo stmgar iskay samny kara taa.



ISKAY LAB PAR PARAY TH

Episode 35 part 2 Nafrat Mohabbat  novel last

Dosri janib chand lamy iski bikri halat daikny kay bad barik labon par nihayt  madham muskrat pehli tee wajiya chera zard mail  ho chuka taa js pr takleef kay asrat ab bHi rakam tay isay udasi say muskraty daik neli ankon say taizi say aik ansoo gal par akar pela or kusi o bay yaqni ki mli jli kfit mein ayat bina kuch sochy smjhy tezi say qadam barhati balaj kay saamny kari hoi or balaj ko bolny ka bina maoka diya wo isay galy lgay poot poot kay rony lagi balaj sisdar ra giya tooo kiya wo is narz nai tee.


Bay sakta isy apny app par gusa aya zain mein wo waqt gardish kiya taa isy hosh aya tab isny khud ko haspital mein paya ta. Woo ayat koo or duk ni dena chata taa is liya jan booj kar isnay khud apni kar kay sat trailar ki takar li laikn qismat bi na isy pir say ni zindgi mil gi.


NATAK

Is liya isny marny ka natak kia takay wo is ki zindgi say bahot door cala jai laikn ayat ki judai isay pir say ayat kay pas lay ai wo ayat kay bgair  ni ra sakta is liya isnay socha taa jab tak ayat isay maaf ni karti wo pechy ni haty ga iska sara gusa katm kar day ga BALAJ MAN APP K BGAIR NI RAA SAKTIApnay seny mein moon cupay aayat  ki awaz ny isay  hosh ki dunya mein wapis laya asodgi say mskrata balaj is kay gird apny dono bazon kw hail kiya.is ik hafty ki taklif say barh kar tee joo in salon mein mujh pr betiAyat kay begi lajy par wo juk kr narmi say iski pesani ko chuma.


wada karta hoon tumari har takleef ka mdhwa apni muhabat say kron ga kabardar joo tum nay  meri khubsort neli ankon par zulm kia.Jazbat say chur lajay mein nihayt meti sargosi krta wo ayat kay gard bazoon ka hasar bna kr bola mukabal ki is waday nay js qadar isay sarsar kiya wo lafzon mein biyan krna namumkin taaa,


AFTER TWO YEARS


MUJY BHOUT DAR LAG RHA HA NASIR


Episode 35 part 2 Nafrat Mohabbat  novel last

Nasir koo daikti wo roty howy boli Nasir koo bhut kiyot lag ri tee man bnny ka noor iskay ceray par taa wo masoom si larki darny ki kiya bat mein hoon na nasir zoya ko tasali daty howy bola joo delivery  ki date nazdik anay par khufzada hoo ri tee ya sab apki waja say howa ha zoya moon basorty howay meri waja say toba kro 5 maheny hogy han hat bi ni lgya tumen nasir mazakiya andaz mein bola ta App bhut ganday haa zoya boli tee abb jasa bee hoon tumara hoon nasir muskra taa iskay blish howay cery koo daik 


aeny kay samny kari wo khud koo daikny mein masrof tee jab pechy say alaj nay isay apny hasar mein liya bhut piyari lag ri hoo mari jan mety andaz mein bolta wo iskay kanon mein ras ghool chuka taa Apni tarf ruk krta wo jesy oi iskay honton par juka bachon ky rony ki awaz an donon ky hal mein lay i Narmi say wo donon koo utata piyar krny laga ALLAH tahala nay onhen do betiyon  say nwaza taa balaj an dono ka lay kar bhut hasas taa.In teeno kw piyar say daikti wo ALLAH ka sukar ada krny lagi in do salon mein balaj nay isay itna pyar dia kay gam kay badlon koo hata kar ik pursakon or sajl jesa badal dia 


THE END

جمعہ، 18 ستمبر، 2020

EPISODE_3 Samundar mein kinara tu by HANIA BUKHARIII

 SAMUNDAR MEIN KINARA TU BEAST


HANIA BUKHARIII

EPISODE_3 Samundar mein kinara tu by HANIA BUKHARIII

EPISODE_3

  یعنی اک شخص مجھے ارض و سما جیسا تھااک ہی شخص پہ مرکوز تھی دنیا میری  پانچ منٹ ہی ہوئے تھے اسے روم میں بیٹھے لیکن آفندی صاحب کا کوئی نام و نشاں نہیں تھا غصے میں وہ خان کی طرف دیکھ رہا تھاآفندی کو نہیں پتا مجھے لیٹ آنے والے لوگ نہیں پسند سخت گھوری سے نوازتا وہ خان سے بولا تھاج۔۔۔جی سر پتا نہیں وہ کیوں نہیں آئے خان ڈرتے ہوئے نظریں جھکا کر بولا تھامیں یہ ڈیل کینسل کرتا ہوں برف جیسا تاثر لیے وہ خان سے مخاطب ہوا تھا لیکن سر یہ میٹنگ بہت اہم ہےخان ڈرتے ہوئے بولا تھا ذوالقرنین کو پسند نہیں کوئی اسے انتظار کروائےوہ کہتا روم سے باہر نکل گیا تھا


بجو

آپ کہاں ہے پلیز مجھے بچا لےاس شخص نے جیسے ہی حوری کے سر سے حجاب اتارا تھا وہ چلاتے ہوئے بولی تھی ذوالقرنین جو اس روم سے گزر ہی رہا تھا کسی کی رونے کی آواز  اسکے کانوں سے ٹکڑائیبجو پلیز مجھے بچالے۔۔۔۔۔۔ایک بار پھر حوری چلائی تھی اسکے دل کی دھڑکن تیز ہوئی تھی ذوالقرنین نے خان کی طرف اشارہ کیا تھا اور وہ اس کی بات پر عمل کرتے ہوئے دو منٹ کے اندر چابیاں لے آیا ذوالقرنین نے جیسے ہی روم کا دروازہ کھولا سامنے کا منظر دیکھ کر اس کو تپ چڑھ گئی لڑکی کے بازو پھٹے ہوئے  دیوار کے ساتھ چپکی اونچی آواز میں رو رہی تھی  اور وہ دونوں ہاتھوں سے  اپنے پھٹے بازوئوں کو چھپانے کی ناکام کوشش کررہی تھی سر نیچے ہونے کی وجہ سے ذوالقرنین اس کا چہرہ دیکھ نہ پایا تھا اور آدمی دو قدم کے فاصلے پر کھڑا ہنس رہا تھا اسکی نیلی آنکھیں غصے کی وجہ سے سرخ لال ہو گئی تھی 


مزید پڑھیں: قست نمبر

خان ذوالقرنین کا روپ دیکھ کر سہم گیا تم نے ایک قدم بھی آگے بڑھایا نہ یہ ذوالقرنین سکندر تمھاری زندگی موت سے بھی بدتر بنا دے گااس نے غراتے ہوئے کہا اس لڑکے کا رنگ فق پڑا اور اسکی دھاڑ سن کے حوری کا سانس سینے میں اٹک کر رہ گیا تم دور رہو ہو کون تم یہ میرا اور اس لڑکی کا معاملہ ہےہمت کر کے وہ شخص بولا تھا حوری کی ہنوز نظریں جھکی تھی اب وہ رونا بھول گئی تھی کیا کہا تم نے تمھیں میری بات سمجھ نہیں آئی ذوالقرنین غصے سے بڑھتے ہوئے بوئے بولا تھا ذوالقرنین کو اتنے غصے میں دیکھ کر اس شخص نے اپنے قدم پیچھے بڑھائے تھے ذوالقرنین ایک سو بیس کی سپیڈ سے اس کے پاس پہنچتے اس کے منہ پر گھونسے پہ گھونسہ مارتا گیا۔ذوالقرنین کی آنکھوں سے لہوں ٹپک رہا تھاپ۔۔۔۔پلیز مجھے معاف کردوذوالقرنین کے سامنے وہ اپنا بچائو بھی نہ کر سکا سر پلیز رک جائے آپ چھوڑ دے میں اسے دیکھتا ہوں خان آگے بڑھتے ہوئے ڈرتے ہوئے بولا 


خان تم پیچھے رہو۔۔۔۔۔۔۔

EPISODE_3 Samundar mein kinara tu by HANIA BUKHARIII


ذوالقرنین خان کو غصے سے گھورتے ہوئے بولاسر پلیز اسے چھوڑ دے میں دیکھ لیتا ہوں۔خان پھر بولا تھا ذوالقرنین نے غصے سے لات مار کر اس شخص کو چھوڑا تھاچلوخان غصے سے اس شخص کو پکڑتا باہر نکل گیاآپ یہاں پر کیا کررہی ہے آ جاتی ہے اپنی عزت کو پا مال کرنے پھر ٹسوے بہاتی ہے۔وہ غصے سے اسکی طرف دیکھ کر بولا تھا حوری نے اپنا آنسوؤں سے تر چہرہ اوپر اٹھایا تھاذوالقرنین اسکے چہرے کو دیکھ ٹھٹکا تھاوہ جو کوئی بھی تھی اسکی عمر اٹھارہ سے زیادہ نہ تھی  اسکے برائون بال آبشار کی طرح بکھرے تھے وہ وائٹ یونیفارم میں ملبوس تھی اور تب اس کے دل نے پہلی بار گواہی دی تھی کہ سفید رنگ آج ہی کسی پہ جچتے دیکھا ہے اپنی زندگی میں اسکے چہرے پر اتنی ملائمت تھی کہ ایک پل کو اسکا دل کیا کہ وہ اسے محسوس کرے  اور پھر اپنی سوچ پر عمل کرتے ہوئے اسکے چہرے کی طرف ہاتھ بڑھایااور دھیرے سے اسکے آنسو صاف کرنے لگااسکی اس حرکت پر وہ سانس روک کر رہ گئی اور آنکھیں پھاڑیں اسے دیکھنے لگی 


اسکی آنکھوں میں خوف تھا  وہ ابھی تک اس کے بازو کے حلقے کے قید میں تھی ذوالقرنین نے اپنا کوٹ اتار کر اس کے گرد لپیٹا تھا اور نیچے سے حجاب اٹھا کر اس کے سر پر رکھا تھا وہ اپنا ضبط کھوتی اسکے کشادہ سینے سے جا لگی۔۔۔روم میں آئے خان کو جھٹکا لگا تھا ذوالقرنین سکندر وہ بھی کسی لڑکی کے پاس اور اتنے قریب وہ اسکے سینے سے لگی پھوٹ پھوٹ کر رورہی تھی م۔۔میں ن۔۔نہیں آئی تھی وہ وہ اسکی شرٹ کو مٹھیوں سے جکڑے بول رہی تھی اس کے نرم ملائم ہونٹ اپنے سینے پر محسوس ہورہے تھے ذوالقرنین سکندر کو اتنے عرصے بعد آج دل میں سکون اترتا محسوس ہوا  تھا کاندھا میرا اور سر تیرا پاگل سی چپ تم اور میں وہ بھول چکی تھی وہ کہاں ہے۔۔۔۔۔وہ بھول چکی تھی کہ وہ کسی اجنبی کے سینے سے لگی رو رہی ہےوہ اپنے سکتے سے باہر نکلتا اس کے بال سہلانے لگش۔۔۔ش چپ ہو جائیں کچھ بھی نہیں ہوا سب ٹھیک ہےذوالقرنین خان کی موجودگی سے بے خبر تھااسے ہوش تب آیا جب وہ روتے روتے بیہوش ہو کر اس کی بانہیں میں جھول گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔



خان

وہ اس کے گال تھپتھپانے کے ساتھ خان کو پکارنے لگاج۔۔۔جی سرخان ہوش میں آتے ہوئے فورا ذوالقرنین کے پاس پہنچا گاڑی نکالووہ بنا خان کو دیکھے بولا اور اسکو بانہوں میں اٹھائے باہر کی جانب دوڑ لگا دیایمن تم اتنی پریشان کیوں ہو۔۔۔۔۔۔۔۔آہل جو ایمن کو تنگ کرنے کے بہانے باہر نکلا تھا ایمن کو یوں پریشان زیکھ کر پوچھے بنا نہ رہ سکا تم سے مطلب۔۔۔۔۔۔۔ایمن آہل کو دیکھتی روکھے انداز میں بولی تھی یہ تو تم ہر وقت مطلب کی بات کرتی رہتی ہو بڑی مطلبی ہو تم۔۔۔۔۔۔۔آہل معصومیت سے بولا تھاایمن نے ابرو اچکا کے آہل کع رئیلی کا تاثر دیا تھاآیل نے فورا نفی میں سر ہلایا تھایار تم مجھ سے اتنی چڑتی کیوں ہوآہل لہجے میں حیرانگی سموئے ایمن سے پوچھنے لگاکیونکہ تم پاگل ہو اور مجھے پاگل لوگوں سے چڑ ہےایمن لہجے میں طنز لیے بولی


یار تمھیں کیسے پتا چلا میں پاگل ہوں پھٹی پھٹی آنکھیں کھولے وہ ایمن سے مخاطب ہواایمن نے اپنا سر پیٹا تھامیں حیران ہوں تم سر کے دوست ہو وہ اتنے میچور اور خود کو دیکھوایمن حیرانگی سے بولی تھی بس دیکھ لوآہل نے فخریہ اپنے کالر جھاڑے تھےاچانک ایمن کی نظر موبائل پر پڑی جس میں حوری کی پک لگی تھی حوری تم ٹھیک تو ہو نہ میرا دل اتنا کیوں گھبرا رہا ہےایمن نے دل پی دل میں سوچا تھا اس کے چہرے پر پریشانی صاف واضح دکھ رہی تھی ایمن تم ٹھیک ہوآہل فکر مندی سے پوچھا تھاتم یہاں پر کیا کررہے ہوایمن ایک بار پھر غصے سے بولی تھی یار میں تو اسے ڈھونڈ رہا ہوں پتا نہیں کیاں غائب ہو گئی ہے


 کس کو ڈھونڈ رہے ہووہ جو کھو گئی ہےکون کھو گئی ہےیار پتہ نہیں کدھر چلی گئی کون چلی گئی وہ جسے میں ڈھونڈ رہا ہوں کیوں پہیلیاں بجوا رہے ہو میں چلی جائوں گی یہاں سےیار وہ بھی چلی گئی ہے اب تم بھی چلی جائو گی کون اب کی بار ایمن غصے سے چلائی تھی تمھاری سمائل آہل شرارتی انداز میں بولا تھا



SAMUNDAR MEIN KINARA TU (BEAST)

HANIA BUKHARIIi

EPISODE_3 Samundar mein kinara tu by HANIA BUKHARIII


EPISODE_4

کتنے سادہ ہیں فقیروں کے عقیدے مرشد دیکھ لینے کو لاقات سمجھ لیتے ہیں ٹینشن لینے کی کوئی بات نہیں کمزوری اور صدمے کے باعث وہ بیہوش ہو گئی تھی کچھ دیر بعد ہوش میں آ جائے گاڈاکٹر پروفیشنل انداز میں کہتی جا چکی تھیذوالقرنین کے دل کو سکون پہنچا تھاان کی ساری ڈیٹیلز نکلوائو اور ان کے گھر والوں کو انفارم کر دوذوالقرنین خان کو سنجیدگی سے دیکھتے ہوئے بولاجی سر۔خان نظریں جھکائیں بولا تھاذوالقرنین روم میں داخل ہوا تو اس کی نظر حور پر ٹہر گئی ذوالقرنین کے دل نے ایک بیٹ مس کی تھی وہ چلتا ہوا اس کے قریب بیٹھ گیا اور اسکو سوتے ہوئے دیکھنے لگا دل کررہا تھا یہ وقت کبھی نہ ختم ہو وہ اسے یوں ہی پوری زندگی دیکھتا رہے گلابی ہونٹ سختی سے آپس میں پیوست تھے ا ور نچلے ہونٹ کے نیچے زرا فاصلے پر چھوٹا سا تل۔۔۔۔۔۔



 ذوالقرنین نے ہاتھ بڑھا کر نرمی سے  ہونٹوں کو چھوا تھا اور پھر اسکے تل کو اب اسکی نظر سلکی بھورے بالوں پر گئی جو ماتھے پر بکھرے تھے ذوالقرنین نے ہاتھ بڑھا کے پیچھے کیے تھے اب اس کی سفید پیشانی سامنے تھی ذوالقرنین یہ تمھیں کیا ہورہا ہے کیوں تو اس لڑکی کو دیکھا جارہا ہےذوالقرنین نے دل میں سوچا تھا وہ جیسے ہی اٹھنے لگا لیکن پھر بیٹھ گیا دل انکاری تھا اسکے پاس سے اٹھنے کوذوالقرنین سکندر ہے تو ذوالقرنین سکندر کے پیچھے لڑکیاں مرتی ہے نہ کے ذوالقرنین لڑکیوں پرذوالقرنین نے دل ہی دل میں سوچا تھا


ہوش میں آتے ہی وہ چلانے لگی اور بازو میں لگی ڈرپ کی سوئی اتار کے پھینک دی بجو پلیز بچالےآنکھیں بند کیے وہ چلارہی تھی ذوالقرنین ایکدم ہوش میں آیا تھاآنکھیں کھولیں دیکھیں آپ ٹھیک ہےذوالقرنین حوری کے ہاتھ پر ہاتھ رکھتے ہوئے بولاکسی کی نگاہوں کی تپش اور لمس سے اسے ہوش کی وادیوں میں لیکر آئی اسنے جھٹ  سے آنکھیں کھولی تھی گزا لمحہ اس کے ذہن میں گردش کرنے لگا آمنہ کا اسے ہوٹل میں چھوڑنا پھر اس انجان شخص کا بچاناآخری خیال کے ذہن میں آتے ہی وہ پھرتی سے اٹھی لیکن سامنے نظر پڑتے ہی وہ رک گئی


اچانک اس کی آنکھوں کے سامنے ایمن کا چہرا لہرایا اور اس کے الفاظ کانوں سے ٹکڑائے تھےسب مرد ایک جیسے ہوتے ہیں اس پہ نظر پڑتے ہی خوف کی ایک سرد لہر اسکے رگ و پے میں داخل ہو گئی وہ اٹھ کے دروازے کی اور بڑھنے لگی جب اسکی پرسکون آواز نے اسکے قدم جمادیےآپ کہاں بھاگ رہی ہےاسکی بات پہ تھم گئی اور طیش کی ایک لہر اسکے اند دوڑ گئی اتنے میں خان بھی روم میں داخل ہو گیامیں بھاگ نہیں رہی گھر جانا ہے پلیز مجھے جانے دووہ غصے سے بولتی سسک پڑی خان ہکا بکا اس لڑکی کو دیکھنے لگا ایک تو بچایا اوپر سے یہی غلط سمجھ رہی


تمھاری ہمت

تمھاری ہمت کیسے ہوئی اسے چھونے کی اسکی  آنکھوں میں دہشت تھی سامنے والوں کو اپنی جان نکلتی محسوس ہوئی

پ۔۔۔پلیز مجھے معاف کردوسامنے والے کے ڈر سے وہ گر گرایا معافی کی کوئی گنجائش نہیں تم نے اسے چھو کے گناہ کیا ہےبرف جیسا تاثر لیے وہ اس سے مخاطب ہواپ۔۔۔پلیز آئندہ میں نہیں کروں گا پلیز مجھے چھوڑ دواب کی بار وہ شدت سے روتے ہوئے بولاتم جانتے ہو میں کون ہوں کمرے میں گپ اندھیرے کی وجہ سے وہ صرف اسکی آواز سن سکتا تھا ہاں میں جانتا ہوں تم بیسٹ ہو ایک سنگدل وہ روتے ہوئے بولا تھا



کمرے میں ہر طرف اسکے ہنسنے کی آواز گونجنے لگی پلیز مجھے معاف کردوسامنے والی کی ہنسی دیکھ کر وہ خوف میں مبتلا ہو گیا اسکے ہاتھ پاؤں پھولنے لگےبیسٹ معاف کرنا نہیں جانتا وہ بس سزا دینا جانتا ہے جس کے تم حقدار ہووہ سرد تاثر اپنائے اس سے مخاطب ہواپ۔۔پلیز اسکو کچھ بولنے کا موقع دیے وہ بلیڈ سے اسکی گردن کاٹ چکا تھاسامنے والے ہاتھ بالکل بھی نہ کانپے تھے کمرے میں اس شخص کی دل خراش چینخے تھی


اتوار، 13 ستمبر، 2020

EpiSode 1 SAMONDAR MEN kaNARA TU Novel by Hania Bukharii

 SAMUNDAR_MEIN_KINARA_TU (BEAST)


EpiSode_1 

EpiSode 1 SAMONDAR MEN kaNARA TU Novel by Hania Bukharii



حسرتیں مچل گئیں جب تم کو سوچا اک پل کے لیےدیوانگی کیا ہو گی جب تم ملو گے مجھے عمر بھر کیلیے کانگریجولیشنز ذوالقرنین سکندرغازی صاحب چہرے پر ایک بھر پور مسکراہٹ کے ساتھ ہاتھ ملانے ہوئے اسے مبارکباد دینے لگے تھینک یواس کے تاثرات برف کی طرح سرد تھےآج پھر تم ہم سے جیت گئے ہمیں فخر ہے تم پرغازی صاحب ایک بار پھر بولے   ذوالقرنین سکندرنے ہارنا کبھی نہیں سیکھا اور وہ بھی اس سے جو  پہلے سے یارا ہوتاثرات اب بھی برف کی طرح پتھریلے تھےاسکی اس بات پہ انکا چہرہ سرخ ہو گیا تھا لیکن وہ کچھ بھی کہنے سے قاصر تھے کیوں کہ راکنگ چیئر پر بیٹھا وہ  سیاہ پینٹ کوٹ میں ملبوس لمبا قد کھڑے مغرور نقوش وہ شخص ایک معمہ تھا اسکی شخصیت کو جو چار چاند لگاتی تھی وہ تھی اسکی خوبصورت نیلی آنکھیں جو کسی کو بھی اپنا دیوانہ بنانے پر مجبور کر دیتی تھیٹھیک ہے اب میں چلتا ہوںغازی  اسکو وہی چھوڑتے نکل گئے اتنی بے عزتی ان کی برداشت کے حد سے باہر تھی


سر گاڑی نکالوں

غازی صاحب کے جاتے ہی خان جن کی طرح حاضر ہوتے ہی بولاہاں نکالولہجہ اب بھی برف جیسا تھاجی سرحکم ملنے ہی خان جن کی طرح غائب ہو گیاسکندر ولا کے سامنے گاڑیاں رکتے ہی ڈرائیور نے مستعدی سے دروازہ کھولا اور وہ مضبوط قدموں سے وسیع و عریض لان کی درمیانی روش کو عبور کرتا ہوا اندر داخل ہوا یار تو کدھر رہ گیا تھا میں انتظار کر کر کےآہل معصومیت سے ذوالقرنین سے پوچھنے لگااسنے فقط ابرو اچکا کے رئیلی کا تاثر دیااسکا رنگ فق ہو چکا وہ نفی میں گردن ہلانے لگاس۔۔سوری یار میں لیٹ ہو گیا کچھ کام آ گیا تھاآہل معصومیت سے بولا تھا ورنہ اس انسان کے سامنے اسکی جان نکلتی تھی ٹھیک آئندہ ایسا نہ ہوآہل کو وہ وارن کرنا نہ بھولا تھامعاف کردے یارآہل معصومیت سے بولا تھا

مزید پڑھیں: قست نمبر



بس اب ڈرامے نہ کر جانتا ہوں تمھیں ۔۔۔۔۔۔

ذوالقرنین مسکراتے ہوئے بولا تھاکتنا پیارا لگتا ہے نا مسکراتے ہوئے یااللہ جی پلیز اسکی مسکراہٹ کا سبب کوئی لے آئے وہ مسکرانا سیکھ جائےآہل نے دل ہی دل میں دعا کی تھی اٹھ جائو حوری کالج لیٹ ہو جائو گیایمن پیار سے حوریہ کے ماتھے پر بوسہ دیتے ہوئے بولی بجو اٹھتی ہوں۔حوریہ تکیے میں منہ دیتے ہوئے بولی حوری میری جان اٹھ جائو نہ ایمن ایک بار پھر پیار سے بولی بجو پلیز نا دو منٹ حوریہ ہنوز تکیہ میں منہ دیتی ہوئی بولی اب تم نہ اٹھی میں ناراض ہو جائوں گی ایمن مصنوعی غصہ لیے بولی بجو اٹھ گئی حوریہ نے ایک دم آنکھیں کھولی تھی چلو اب جلدی تیار ہو جائو ناشتہ کرو مجھے آفس بھی جانا ہے لیٹ ہو رہی ہوں وہ پیار سے حوریہ کو دیکھتے ہوئے بولی 


جی بجو

EpiSode 1 SAMONDAR MEN kaNARA TU Novel by Hania Bukharii
ایمن کو اپنی یہ ڈمپل والی گریا بہت پیاری تھی معصوم سی بچوں جیسی حرکتیں کرنے والی اسکی لاڈلی اسکی جان پیاری بہن تھی

SAMUNDAR_MEIN_KINARA_TU(BEAST)

HANIA_BUKHARIII

EPISODE_2


 تیرے روح کی سادگی اور تیرے پیار کی عاجزی سے پیار ہےورنہ حسن تو ازل سے بکتا رہا ہے مصر کے بازاروں میں  حوری چلو نہ ریسٹورینٹ چلتے ہےکالج میں وہ دونوں کیفے میں بیٹھی تھی جب آمنہ نے بات کا آغاز کیا  نہیں یار مجھے کہی نہیں جانا میں سیدھا گھر جائوں گی۔حوریہ معصومیت سے بولی تھی پلیز نہ حوری سب جاتے ہے میں ہوں نہ تمھارے ساتھ۔آمنہ اسے تسلی دینے لگی بجو کو پتا چل گیا نہ وہ غصہ کرے گی۔حوریہ کی آنکھوں میں ایمن کا چہرہ لہرایا تھا انھیں کوئی بتائے گا تو تب نہآمنہ منہ بناتے ہوئے بولی تھی


لیکن آمنہ

حوریہ کچھ بولنے ہی لگی تھی آمنہ بیچ میں بات کاٹ گئی اب تم نے انکار کیا نہ تو میں ناراض ہو جائوں گی آمنہ ایک ادا سے بولی تھی ٹھیک ہے لیکن ہم جلدی آ جائے گے۔وہ تھی ہی اتنی معصوم کسی کی ناراضگی وہ برداشت نہیں کر پاتی تھی آمنہ نے جلدی سے میسج میں ڈن لکھااس کے چہرے پر مکرو مسکراہٹ پھیلی تھی فائل اسکے سامنے کھلی پڑی تھی جبکہ چہرہ ضبط کی گہری نشاندہی کررہا تھا آنکھوں سے گویا لہوں ٹپکنے لگایہ انفارمیشن کہاں سے لی اسنے سامنے کھڑے شخص سے سوال کیا 


یہ ہوٹل کے مینیجر نے دی ہے بچپن کا دوست ہے میرا اور اسکا اصل ٹھکانہ وہی ہےاسنے سر جھکائے جواب دیا اور پھر ایک چور نظر اسکے چہرے پر ڈالی جس پہ ناقابل فہم تاثرات تھےہمیں جلد سے جلد وہاں پہنچنا ہو گااسکا سرخ پڑتا چہرہ اسکے ضبط اور شدید غبض کی علامت تھی لیکن آپ کا جانا وہاں خطرے سے خالی نہیں وہ چاہتا یہی  ہے بیسٹ سب کے سامنے آ جائےسامنے شخص جو اسکا ماتحت تھا وہ بیسٹ کو سمجھانے ہوئے بولابیسٹ خطروں کی پرواہ نہیں کرتا یہ تو تم جانتے ہو گےابرو اچکا کے وہ بولا تھا



ماتحت کا چہرہ زرد ہو گیا تھا بیسٹ کے خوف سےآمنہ تم مجھے کہاں لے آئی ہو یہ ریسٹورینٹ تو نہیں ہے۔حوریہ خوف سے بولی تھی کچھ نہین ہوتا اندر چلوآمنہ حوریہ کا ہاتھ پکڑتے ہوئے بولی آمنہ اسے کسی روم میں لے آئی تھی آمنہ تم مجھے کہاں لے آئی ہو حوریہ کے چہرے پر خوف نمایاں تھا


آمنہ اسے وہی چھوڑ کر باہر نکل گئی تھی پیچھے سے حوریہ اسے پکارتی رہ گئی تھی بجو آپ کہاں ہے۔حوریہ گھٹنوں میں منہ چھپا کر رونے لگی ویلکم انار کلی مکرو مسکراہٹ لیے ایک شخص روم میں داخل ہوابچائو مجھے پلیز مجھے بچائو بجو۔حوریہ چلا رہی تھی چپ کر جائووہ شخص چلایا تھا حوریہ پرم۔۔مجھے ۔۔۔۔گ ۔۔۔گھر جانا ہے۔۔۔۔۔پ۔۔پلیز مجھے چھوڑ دو حوریہ ہکلاتے ہوئے بولی تھی سامنے کی مکرو مسکراہٹ دیکھ دل جیسے پھٹنے لگا ہوآج ذوالقرنین کی ایک اہم میٹنگ تھی جس کے سلسلے میں وہ ہوٹل آیا تھا سر اپ رکے میں روم پوچھ کے آتا ہوں۔خان جلدی سے بولا تھا


جلدی کرو تمھارے پاس صرف ایک منٹ ہےبرف جیسا تاثر لیے وہ خان سے مخاطب ہواج۔۔۔جی سروہ جن کی طرح غائب ہوتے ہی کچھ ہی سیکنڈز میں آ گیا تھاچلے سرخان جلدی سے بولا ذوالقرنین کے پیچھے باڈی گارڈز کی ٹیم تھی تم سب یہی رکوباڈی گارڈز کو وہ بولا تھالیکن سر یہ سب آپکی سیفٹی کیلئے ہے۔خان جلدی سے بولا تھااور تم بھی یہی رکوذوالقرنین اب خان کی طرف رخ کیے بولا تھا


نہیں سر میں آپ کے ساتھ جائوں گا کچھ بھی ہو جائے۔خان نفی میں سر ہلانے بولا تھااوکے فائن وہ جانتا تھا خان کسی بھی طریقے سے نہیں مانے گاخان کے چہرے پر مسکراہٹ پھیلی تھی۔ذوالقرنین نے ابرو اچکائیں تھےخان کا چہرہ فق ہویا تھا کیسی ہو ایمن آہل ایمن کو دیکھتے ہوئے بولا جو کوئی فائل پڑھنے میں مصروف تھی تم پھر آگئے ہوا کے جھونکےایمن منہ بناتے ہوئے بولی تھی کیا کہا ہوا کے جھونکے کس اینگل سے تم نے تم پھر موٹی بھینس ہوآہل تیزی سے بولا تھا تم نے مجھے موٹی بھینس کہا ہوا کے جھونکے ایمن غصے سے بولی تھی


موٹی بھینس

موٹی بھینس موٹی بھینس آہل بنا رکے بولا تھا تمھارا تو آج میں خون پی جائوں گی ایمن غراتے ہوئے طولی تھی

آہل ایمن کو غصہ دیکھ فورا سے وہاں سے نکل گیا



جمعرات، 10 ستمبر، 2020

EpiSode 35 Nafrat Mohabbat Serf tumhii say Novels | last episode

 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se

 Amara Mughal 

Episode 35

     Last Episode

EpiSode 35 Nafrat Mohabbat Serf tumhii say Novels | last episode





Nafrat

بالاج جیسے ہی روم میں داخل ہوا اس کی پہلی نظر آیت پر پڑیآ۔۔۔آیت بالاج کو کچھ سمجھ نہیں آرہی تھی وہ کیا بولے پھر بھی اپنی پوری ہمت جمع کر کے بولا بالاج کی آواز پر آیت نے نظر اٹھا کر اسکی طرف دیکھا آیت کی آنکھوں میں برف جیسا تاثر تھا میں جانتا ہوں میں معافی کے لائق نہیںتو پھربالکل اجنیت بھرا لہجہ تھا بالاج چونکا پشیمانی ایسی تھی کہ مقابل لڑکی سے نظریں نہیں ملانا چاہ رہا تھا آیت م۔۔۔مجھے معاف کر دوبالاج نظریں جھکاتا ہکلاتے ہوئے بولامیں کس حق سے آپ کو معافی دے دوں بالاج آپ کی وجہ سے میرے بابا اس دنیا سے چلے گئے آپ نے مجھے ان سے ملنے نہیں دیا اور وہ جدائی سہتے سہتے اس دنیا سے چلے گئے صرف آپ کی وجہ سےآیت چینختے ہوئے روتے ہوئے بولیپ۔۔۔۔پلیز آیت مجھے معاف کردو



اس کے سپاٹ تاثرات کو کرب سے دیکھتا بالاج دھیمی آواز میں التجا کیا لہجے میں درد کی بے پناہ آمیزش تھی مقابل کی آنکھوں میں حد سے زیادہ سرخ ڈورے اگر آیت نفرت کے پردے ہٹا کر دیکھتی تو ضرور کانپ جاتی میں معاف کر دوں آپکو؟۔ہنوز اجنیت بھرا انداز

Mohabbat

EpiSode 35 Nafrat Mohabbat Serf tumhii say Novels | last episode

بالاج کی ہمت جواب دی آنکھیں میں پشیمانی کی نمی لیے وہ آگے بڑھتا گھٹنوں کے بل آیت کے سامنے بیٹھا میں جانتا ہوں میں معافی کے لائق نہیں ہوں مجھے تمھارا اعتبار کرنا چاہیے تھا لیکن میں نے نہیں کیا مجھے معاف کر دو آیت کرب بھرے لہجے میں کہتا وہ آیت کے سپاٹ تاثرات دیکھ اور آگے ہوامیں تمھاری معافی کے لائق نہیں ہوں لیکن پلیز تم میرے ساتھ ایسا رویہ نہ رکھو میں مر جائوں گااپنے الفاظ اسے رائیگاں لگ رہے تھے کیونکہ مقابل بیٹھی لڑکی اسے یوں دیکھ رہی تھی جیسے کچھ سنا ہی نہ ہو پلیز آیت ایسا رویہ مت رکھوتڑپ کر کہتا وہ آیت کے پاوں پر ہاتھ رکھا



مزید پڑھیں: قست نمبر

 



آیت فورا پیچھے ہوئی تھی

آپ میرے بابا کے قاتل ہے سوچنا بھی مت میں اپنے بابا جانی کا قتل معاف کروں گی نیلی آنکھوں میں غضب کا اشتغال تھا اس کے منہ سے الفاظ سنتا بالاج زمین پر گڑھتا گیا آج اسے احساس ہوا تھا اس لڑکی پر کیا گزری ہوگی تڑپ سے آنکھیں میچتا وہ آیت کو ان الفاظوں سے ملی تکلیف کو واضح محسوس کیا تھا میں نے تم پر ظلم کیا نا اسی کی سزا مجھے مل رہی ہے میرا بھائی میرا ہی دشمن نکلااسے بات بتاتا بالاج رونے کو ہوا تھا جس پر آیت تنفر سے دیکھ اپنا سر جھٹکی تم بتائو ایسا کیا کروں جس سے میری ذیادتیوں کا مداوا ہو

 

نم لہجے میں وہ اس کے سامنے فریاد کیا تھا اسے یوں دیکھ آیت کو بے ساختہ وہ وقت یاد آیا جب وہ اس کے سامنے فریادیں کرتی اسے بھوسہ دلاتی یقین دلاتی میں قاتل نہیں ہوں معافی چاہیے نہ آپ کو تو میرے بابا مجھے لا کر دے میں آپکو معاف کردوں گیآیت چینخی تھیبالاج کو کچھ سمجھنہیں آرہی تھی وہ کیا بولےمیں نے اپنے دل کو مضبوط بنایا تھا بالاج صرف آپ کیلئے آپ ایک دن مھھ پر بھروسہ کرے گئے یقین کرے گئے میں قاتل نہیں ہوں ہمارے رشتے میں تو بھروسہ چلتا تھا آپ نے میرے ساتھ اتنا ٹائم گزارا لیکن آپ کو مجھ پر بھروسہ نہ آیا کیا یہ تھی آپ کی محبت


آیت

بالاج مزید کچھ بولتا آیت نے بالاج کی بات کاٹیآج سچ سب کے سامنے آگیا تو آپکو غلطی کا احساس ہو گیا جب مارخ نے تیمور بھائی کا نام لیا تو آپ نے یقین نہیں کیا آپ نے سچ جانا تیمور کو کوئی پھنسا رہا ہے اگر آپ نے اسکا یقین نہیں کیا تو میرا کیسے کرلیا میں کیوں کروں گی ہانیہ کا قتل کیوں ماروں گی اسے وہ میری بھابھی بنے لگی تھی میرے بھائی کی محبت تھی میں کیوں کروں گی ایسے آپ نے ایک دفع بھی غور نہ کیا نہ مجھ پر یقینآیت نم لہجے میں بولتے جارہی تھیآپ نے مجھ سے زبردستی کی میں کچھ نہیں بولی ہر ظلم سہتی رہی کیونکہ مجھے اللہ پر پورا یقین تھا وہ ایک نا ایک دن مجھے بے گناہ ضرور ثابت کرے گا اور اللہ نے مجھے بے گناہ ثابت کیا


میں چاہتی تھی آپ مجھ پر بھروسہ کرے سچ کو جانے لیکن آپ نے نہیں کیا آپ نے میرے بابا کو مجھ سے چھین لیا میرے اندر سے آپ نے محبت ختم کردیآیت کہ کر فورا کمرے سے بھاگ گئی بالاج نے بھی فورا باہر کا رخ کیا



Novel

 شام کو جب ناصر گھر لوٹا جیسے ہی روم میں داخل ہوا تو سامنے زویا کو بیڈ پر لیٹا ہوا پایا رضیہ بیگم نے اسے بتایا تھا اسکی صبح سے طبیعت خراب ہے وہ جانتا تھا اسکی اصل وجہ وہ خود ہے ناصر کو دیکھتی اسنے دوسری طرف کروٹ بدلی تھیناصر فریش ہونے کے لیے آرام دہ کپڑے نکالتا فریش ہونے کے لیے گھس گیا پندرہ منٹ وہ نکلا تو زویا کے پاس آکر بیٹھا زویا چونکی تھی اسکے بیٹھنے پر اور پھر جلدی سے بیڈ پر سے اٹھنے لگی ناصر زویا کو یوں اٹھتے دیکھ اسکا ہاتھ پکڑا تھا میں جانتا ہوں کل میں نے جو کیا وہ بہت غلط تھا مجھے معاف کردوناصر نظریں جھکائیں بولا تھا


زویا بے یقینی سے بالاج کو دیکھنے لگی کیا یہ ناصر ہےچٹکی کاٹےزویا ناصر کے سامنے ہاتھ کرتی بولی ناصر حیرت سے دیکھنے لگا یہ کیا بول رہی ہے چٹکی کاٹےزویا ایک بار پھر بولی تھی پاگل ہو گئی اگر ہو گئی ہو تو پاگل خانے چھوڑ کر آتا ہوں وہی پر کروناصر تیز اواز میں بولاتو اپ ناصر ہی ہےزویا خوش ہوتے ہوئے بولی پگلا گئی ہوناصر زویا کو دیکھتے ہوئے بولی ہاں تو اپ کیا بول رہے تھے مجھے معاف کردوناصر نے ایک بار پھف معافی مانگی تھی مجھے آپکی معافی نہیں پیار چاہیے زویا نم آنکھوں سے بولی تھیزویا کی بات پر ناصر نے نظریں اٹھائی تھی ,آپ دے گئے نا مجھے پیار۔ زویا ایک بار پھر بولی


میں ہانیہ سے محبت کرتا تھا کرتا ہوں اور کرتا رہوں گا لیکن میں کوشش کروں کا تمھارے حق تمھیں دے سکوں تمھیں پیار دے سکوں عزت دے سکوں جس کی تم حقدار ہوناصر کہتے ہوئے زویا کو گلے لگا کر پرسکون کر گیا تھا ہیلوآیت فون اٹھاتے ہوئے بولی کیا آپ مسسز بالاج بول رہی ہےدوسری طرف سے آواز ابھری آیت کو کچھ غلط ہونے کا احساس ہوابالاج سر کا ایکسیڈینٹ ہو گیا ہے میں انھیں ہاسپل لے آیا ہوں سر کی حالت بہت خراب ہےآیت کے سر پر بم پھٹا تھا آسمان جیسے اس کے سر پر آن گرا ہو*مکمل داستان کہہ دوں کہ اتنا ہی کافی ہےتم ہی تم تھے، تم ہی تم ہو، تم ہی تم رہو گے



بالاج کا سنتے ہی وہ فورا ہاسپٹل پہنچی تھی ڈاکٹرز اوپریشن تھیٹر میں تھے آیت کو آئے آدھہ گھنٹہ ہ گیا تھا اب تک بالاج کی صحت یابی کی کوئی خبر نہیں تھی آیت کون ہے پیشنٹ انھیں بلارہے ہے نرس باہر نکلتی جلدی سے بولی م۔۔۔میں ہوں آیت نرس کو دیکھتی ہکلاتے ہوئے بولی جلدی چلے اندرنرس جلدی سے بولتی اندر چلی گئی آیت لڑکھڑاتے ہوئے اندر روم میں گئی جب ااسکی نظر بالاج پر پڑی تو اسکی آنکھیں دھندھلانے لگی بالاج پٹیوں میں جکڑا ہوا تھا


بالاج ہاتھ کے اشارے سے آیت کو بلانے لگا آیت فورا بالاج کی طرف بھاگی م۔۔میرے پاس وقت بہت کم ہے آیت مجھے معاف کردو تاکہ میں سکون سے مر سکوںبالاج ہکلاتے ہوئے بول رہا تھاآپ کہی بھی نہیں جایے گئے آپ مجھے چھوڑ کر نہیں جاسکتےآیت روتے روتے بول رہی تھیتم نے مجھے معاف کیابالاج ایک بار پھر ہکلاتے ہوئے بولاہاں میں نے آپ کو معاف کیاآیت نم آنکھیں لیے بولیاپنا خیال رکھنا میرے بے بی کا بھی خیال رکھنا بیٹا ہوا تو صارم نام رکھنا بیٹی ہوئی تو دعا رکھو گی نا بالاج آیت کا ہاتھ پکڑتے ہوئے بولانہیں آپ خود اپنے بے بی کا نام رکھے گئے۔۔۔۔۔۔۔آیت نفی میں سر ہلاتے ہوئے روتے ہوئے بولیمجھے معاف کردینابالاج کا ہاتھ چھوٹا تھاب۔بالاج آیت کی چینخ نکلی تھی 


Sorry he is no more

ڈاکٹر کی بات پر آیت دنیا سے بے گانہ ہو گئی مرے خوابِ الفت کی تعبیر لا دومجھے قید کرلے وہ زنجیر لا دو یقینِ محبت کی یہ شرط کیسیوہ کہتا ہے پانی پہ تحریر لا دو



جمعرات، 3 ستمبر، 2020

EpiSode 34 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se | amara mughal novels

  Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se 

 Amara_Mughal

EpiSode_34

EpiSode 34 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se | amara mughal novels


(2nd last episode)

لے جائو انسپیکٹر اسےبالاج رخ موڑتے غرایا تھا بالاج یہ تو اچھا نہیں کررہا میں نے کچھ نہیں کیا تیمور کا لہجہ معصومیت بھرا تھا تیمور تم نے ہانی کو کیوں مارا وہ تو تمھیں اپنا بھائی مانتی تھی تمھاری کتنی عزت کرتی ہے کیوں تیمور میں تمھیں کبھی معاف نہیں کروں گابالاج کا لہجہ  برف جیسا تاٹر تھا بالاج اس سے پہلے تیمور کچھ بولتا بالاج نے کھینچ کر تیمور کو تھپڑ ماراتم نے میرے بھروسے کو توڑا ہے تم نے مجھے جیتے جی مار دیا میں دنیا میں سب سے زیادہ تم پر بھروسہ کرتا تھا تمھیں مانتا تھا بالاج کا لہجہ مان ٹوٹنے والا تھا تمھاری اتنی ہمت تم نے مجھے تھپڑ ماراتیمور غصے سے بالاج کی طرف بڑھتے ہوئے بولا انسپیکٹر نے فورا تیمور کو پکڑا تھاہم نے تو سنا تھا دوست وفا کرتے ہےجب ہماری باری آئی تو بازی ہی الٹ گئی


بالاج طنزیہ بولا

میں تم سے بدلا لینے ضرور آئوں گا چھوڑوں گا نہیں تمھیں انسپیکٹر تیمور کو گھسیٹتے ہوئے لے جارہے تھے تب وہ غصے سے بولاانسپیکٹر رکیےبالاج نے انسپیکٹر کو رکنے کا کہا تھا کس ۔۔۔۔۔کس چیز کا بدلا لو گے تم سب کچھ تو تم نے میرا لے لیا ہے میری ہانی ایون کے میری محبت تمھاری صرف تمھاری وجہ سے میں نے اس کے ساتھ کیا کیا نہیں کیا اب کیا کرو گے تم بالاج تیمور کا کالر پکڑتے ہوئے غصے سے غرایاجو تمھارے باپ نے میرے ماں باپ کے ساتھ کیا کیا وہ ٹھیک ہے  تم سب کو نہیں چھوڑوں گا تیمور بالاج کا ہاتھ اپنے کالر سے جھٹکتے ہوئے بولابابا نے جو کیا وہ ان کی غلطی تھی ہماری نہیں تو تو ہمارا بھائی تھا لے جائے انسپیکٹر اسے اور اسے سخت سے سخت سزا ملنی چاہیے

بالاج انسپیکٹر کو بولا تھا

EpiSode 34 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se | amara mughal novels

دیکھ لینا میں آئوں گا ضرور تمھاری موت بن کرتیمور جاتے جاتے بولا تھابالاج نے جب رخ موڑا تو آیت وہاں نہیں تھی وہ وہی صوفے پر ڈھے گیاآیت نے شکرانے کے نفل ادا کیایااللہ جی آج میں بہت خوش ہوں آپ نے میری بے گناہی ثابت کردی میں غلط نہین تھی میں نے ہانیہ کا قتل نہیں کیا یااللہ جی آپ غفورورحیم ہےدعا میں ہاتھ اٹھائے آیت اللہ تعالی کا شکر ادا کررہی تھی کافی دیر سے صوفے سے ٹیک لگائے بیٹھا وہ خود سے سر زد ہوئے ظلموں کا سوچتے اب آنکھیں موندا تھا آنکھ کے کنارے پر ٹہرا ایک ندامت کا آنسو چپکے سے نکلتا اسکی داڑھی میں جذب ہو گیابے سکونی سے بھرا دل بھر آیا اس لڑکی پر اپنی بے یقینی کا سوچ کیوں وہ اس قدر بے رحم بنا تھا آخر وہ تو محبت تھی اسکی وہ روتی تڑپتی رہی اور وہ ڈرامہ سمجھتا رہا ۔میں نے کچھ نہیں کیاکتنے کرب کے عالم میں کہتی تھی وہ میں نے کچھ نہیں کیا مگر اس وقت جیسے بالاج سکندر بے بہرہ بنا ہوا تھا کیا ہوتا وہ اس کے الفاظوں پر غور کرتا


میں نے نہیں مارا ہانیہ کواس کے تڑپتے الفاظ کانوں پر پڑے تو بالاج سکندر کو سانس لینا محال ہو گیا وہ سچ تو کہ رہی تھی نہیں مارا تھا اسنے ہانیہ کو آج وہ خون کے آنسو رو رہا تھادوسری طرف تیمور اسکا دوست اسکا بھائی وہ ایسا کرسکتا تھا اسنے کبھی یہ سوچا ہی نہیں تھایہ سوچنے سوچتے وہ پاگل ہوئے جارہا تھازویادروازہ ناک ہونے کے بعد رضیہ بیگم کی آواز کانوں میں ٹکڑائی تو اسنے اپنی سلگ ہوئی آنکھوں کو وا کیا کیا ہوا زویا تم ٹھیک تو ہو نا آج بریک فاسٹ بھی کرنے نہیں آئی رضیہ بیگم فکر مندی سے بولی تھی


مزید پڑھیں: قست نمبر

نہیں ماما بس سر میں درد ہےزویا آنکھیں بند کرتے ہوئے بولی ٹھیک ہے میں ناشتہ لے کر اتی ہوں پھر دوائی لے لینالہجہ ہنوز فکرمندی والا تھانہیں ماما پلیز میرا دل نہیں ہےزویا کا لہجہ بے پرواہ تھاکیوں کدھر ہے دل رضیہ بیگم بے یقینی سے بولی بس ماما ویسے ہی زویا اکتائے ہوئے لہجے میں بولی ناصر کے پاس ہے دل رضیہ بیگم پیار بھری مسکراہٹ سمیت بولی ناصر کے نام پر زویا کی آنکھ سے آنسو گرا تھا

منگل، 25 اگست، 2020

EpiSode 33 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se novel

 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se 
 Amara Mughal 

Episode 33

EpiSode 33 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se novel


3rd last Episode 

تین دن ہو گے تھے بالاج گھر لوٹ کر نہیں آیا تھا اور نہ ہی آیت نے پوچھنے کی ہمت کی تھی بالاج نے اسے کالز کی لیکن آیت نے ایک کال بھی نہ اٹھائی ابھی بھی وہ بیڈ پر ٹیک لگائے آنکھیں موندیں بالاج کے بارے میں سوچی جارہی تھی آنکھوں کے سامنے تین دن پہلے کا منظر لہرایا تین دن پہلے وہ رات کو واک پر گئے تھے آپس میں باتیں کرتے کرتے اتنے آگے نکل گئے انھیں احساس ہی نہیں ہوا یہ پہلی بار تھا جب انھوں نے آپس میں اتنی ساری ڈھیڑ باتیں کی اور پھر جب وہ گھر واپس آئے تو بالاج نے مووی لگالی جس میں فنی سینز دیکھ کر وہ دونوں ہی ہنس رہے تھے اور ساتھ ساتھ مووی بھی انجوایے کررہے تھے آیت کو لگا تھا وہ کتنے سالوں بعد کھل کر ہنسی ہو  بالاج بھی اپنی عادت کے برخلاف فنی سینز پر ہنسا جارہا تھا 

EpiSode 33 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se novel


بالاج کی نظر وقفے وقفے سے آیت پر اٹھتی وہ زور زور سے ہنستی ہوئی مووی کو خوب انجوائے کررہی تھی بالاج اس کو دیکھ کر مسکرا دیتا کیونکہ وہ ہنستے ہوئے بہت کیوٹ لگ رہی تھی آیت کی ہنسی کو بریک تب لگا جب تانیہ اسکی آنکھوں کے سامنے سے بالاج کا ہاتھ پکڑے لے گئی ایک بار پھر بالاج کی کال آئی وہ غائب دماغی سے اسے دیکھتے لگی اب اسنے موبائل آف کردیا تھا پندرہ منٹ ہوئے تھے جب اسے دروازہ کھولنے کی آواز آئی کون ہے آج تو کوئی ملازم گھر نہیں تو پھر کون ہو سکتا ہے


کون ہے 

آیت جلدی سے بیڈ سے اٹھی بیڈروم سے نکلتی وہ بلند آواز میں پوچھتی لائونج میں آئی تب پیسج میں سے دو آدمی لائونج کے اندر داخل ہو چکے تھےکون ہو تم اندر کیسے آئےان دونوں نے ماسک پہنے تھے آیت ان دونوں کو حیرت سے دیکھتی ہوئی پوچھنے لگی اسے کچھ گربڑ کا احساس ہوا  یہی ہے وہ ان میں سے ایک آدمی نے اپنے ساتھی سے کہاآیت کو اس آدمی کی آواز جانی پہچانی لگی کون ہو تم اور یہاں کیا کررہے ہوخوف اسکے چہرے پر طاری تھااس سے پہلے وہ دونوں آیت کی طرف بڑھتے وہ بھاگتی ہوئی جلدی سے لائونج میں موجود سلائیڈ ڈور کا دروازہ لاک کرکے اپنے بیڈروم کی طرف بھاگی جب وہ بیڈ روم کا دروازہ بند کرنے لگی تو تب اسے سلائیڈنگ ڈور کا شیشہ توڑنے کی آواز آئی وہ دونوں اب آدمی اس کے کمرے کے باہر کھڑے مسلسل دروازے پر دھکے ماررہے تھے اور دروزے کا لاک کھولنے کی کوشش کررہے تھےاچانک اسکی نظر موبائل پر پڑی وہ جلدی سے بالاج کا نمبر ملانے لگی



بالاج آپ کہاں ہے پلیز کال ریسیو کرے

EpiSode 33 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se novel

آیت روتی ہوئی بے بسی سے بولی اسکی نظریں مساسل دروازے پر ٹکی تھی زور زور سے دروازے پر دھکا مارنے کی وجہ سے دروازے  پر لگی چٹکی کھل چکی تھی تھوڑی دیر اور مکہ مارنے کی وجہ سے اب دروازہ ٹوٹ چکا تھااس کو جلدی ٹھکانے لگا کے نکلنا ہےان میں سے پھر اسی ساتھی نے بولاآیت خوف کی وجہ سے سہم کر دیوار کے ساتھ لگ گئیاتنی جلدی کیا ہے پہلے اس چلبلی کے ساتھ تھوڑا مزا تو کر لوں ایک ساتھی خیانت سے بولادور رہو مجھ سےآیت خوف سے بولی وہ اب آدمی بالکل اسکے قریب پہنچ چکا تھا



آیت کی چینخ نکلی تھیایک قدم بھی  آگے بڑھایا نا تو بالاج سکندر سے برا کوئی نہ ہو گا بالاج کی آواز کسی دھاڑ سے کم نہ تھی بالاج کو اپنے سامنے دیکھ کر آیت کو ایسا لگ رہا تھا جیسے اس کے اندر نئی روح پھونکی گئی ہووہ بھاگتی ہوئی بالاج کے گلے لگ گئی میں آ گیا ہوں نا کچھ نہیں ہو گا بالاج آیت کو سینے سے لگائے پیار سے بولا وہ دونوں ساتھی جیسے ہی بھاگنے پولیس نے انھیں پکڑ لیا چلو تمھیں سسرال کا دورہ کرواتے ہےانسپیکٹر ان کو دیکھتے ہوئے بولاپولیس ان کو جیسے ہی لے جانے لگی تھی رکیے انسپیکٹر زرا ان کی منہ دکھائی تو کرتے جائےبالاج  پولیس والوں کو روکتے ہوئے بولا


انسپیکٹر نے جیسے ہی ماسک ہٹانے کیلیے آگے  بڑھا ان دونوں میں سے ایک ساتھی ہاتھ چھڑوا کر بھاگنے لگا بالاج نے جلدی سے اس کو پکڑ ایک گھونسہ منہ پر مارا وہ نیچے فرش پر گرابالاج نیچے بیٹھتے ہوئے جلدی سے اسکا ماسک اٹھاآیت بے یقینی سے اس شخص کو دیکھنے لگی بالاج بے یقین سا فرش پر ڈھے گیاآیت بے یقینی سے بولی تیمور کے چہرے پر خوف نمایاں تھاآپ کو تو میں نے بھائیوں جیسا مانا تھا تیمور بھائی اور آپ کیا کرنے جارہے تھےآیت بے یقینی سے دیکھتی روتے ہوئے بولی تھی م۔۔۔۔مطلب تم ہی ہا۔۔۔۔ہانیہ کے قاتل بالاج بے یقینی سے تیمور کو دیکھتے ہوئے بولا


مزید پڑھیں: قست نمبر  

یہ تم کیا کہ رہے ہو بالاج تیمور ہوش سمنبھالتے ہوئے بولاتانیہ بالاج نے تانیہ کو پکارا تھاتانیہ پولیس والوں کے ساتھ اندر داخل ہوئی تانیہ کو دیکھ کر تیمور کے چہرے کا رنگ بدلا تھا تم کیا سمجھتے تھے میں تانیہ سے پیار کرتا ہوں تب اسکے آگے پیچھے منڈلاتا رہتا تھا نہیں مسٹر تیمور خان میں تو بس ہانیہ کے قاتل تک پہنچنا چاہتا تھامیں نے میسجز پڑھ لیے تھے تانیہ کے موبائل سے تم یہ لفافہ ڈھونڈنے آئے تھے اور میری میری آیت کو مارنے آیا تھاکچھ دن پہلے کی بات ہے کال آئی تھی میرے موبائل اور اسنے مجھے سب سچ بتا دیا تھااور تمھیں پتا ہے وہ کون تھی بالاج دھاڑا تھامارخ تمھاری ایکس گرل فرینڈ شرم آتی ہے مجھے تمھیں اپنا بھائی کہتے ہوئےبالاج طیش کے عالم میں غصے سے بولا تھامیں نے کچھ نہیں بالاج یہ سب سازش ہے


تیمور بالاج کو سمجھاتے ہوئے بولا

تمھیں پتا ہے یقین میں نے بھی نہیں کیا میں نے مارخ کو صاف منع کردیا میرا وہ میرا بھائی ہے وہ کبھی مجھے یا میرے بہنوں کو نقصان نہیں پہنچا سکتا ایسا کرنا تو کیا وہ سوچ بھی نہیں سکتا  لیکن وہ نہیں مان رہی تھی تب میں نے اسکو غلط ثابت کرنے کیلئے پلین بنایا لیکن میں خود غلط ثابت ہو گیابالاج کی آنکھ سے آنسو گرا تھانہیں بالاج یہ سازش ہے میں کیوں قتل کروں گاتیمور ایک بار پھر بولابس


بالاج دھاڑا تھا

میںنے کچھ نہیں کیا بالاج تم مجھے غلط سمجھ رہے ہوتیمور بالاج کے پاس آتے ہوئے بولاتو پھر یہاں کیا کررہے تھے میں نے تمھارے نمبر پر میسج کیا تھا تمھیں بلیک میل کیا کہ اس سی ڈی میں تمھارے خلاف ثبوت ہے اور یہ سی ڈی میرے روم میں ہے اور تم اسے ہی لینے آئے تھے نا اور تانیہ کو اسی لیے میرے پاس ائی تاکہ میرا سارا دھیان تانیہ کی طرف ہو جائےبالاج تیمور کو دھکا دیتے ہوئے بولام۔مجھے یقین ہی نہیں آرہا میرا بھائی میرے ساتھ ایسے کرسکتا ہےبالاج غصے سے بولا تھا

جمعہ، 21 اگست، 2020

EpiSode 32 Mohabbat tumse nafrat hai novel

 Nafrat Mohabbat Sirf tumhe se

EpiSode_32

EpiSode 32 Mohabbat tumse nafrat hai novel



ترا فراق بھی،  قربت بھی ایک مسئلہ ہےہمارے ساتھ محبت بھی ایک مسئلہ ہےتمہارے شہر میں داخل ہُوئے تو یاد آیاتمہارے شہر سے ہجرت بھی ایک مسئلہ ہےتمہارے شہر میں آکر رہے تو ہم پہ کھلاہماری گاؤں سے نسبت بھی ایک مسئلہ ہےہمیں کسی نےبتایا تھا ہاتھ ملتے ہوئےزر و زمین بھی عورت بھی ایک مسئلہ ہےعدم وجود کی چاہت تو مسئلہ ہے مگر

عدم وجود سے نفرت بھی ایک مسئلہ ہےہمارے گاؤں کی مٹی میں خواب اُگتے ہیں ہمارے گاؤں میں غربت بھی ایک مسئلہ ہےخیال و خواب کی بیباکیوں کے پیشِ نظرخیال و خواب میں خلوت بھی ایک مسئلہ ہےتمہیں ہمارے لیے وقت ہی نہیں ملتا ہمارے واسطے فرصت بھی ایک مسئلہ ہے 



بالاج کو جب سے آیت کی بیماری کا علم ہوا تھا وہ اسکا ہرطرح سے خیال رکھنا شروع ہو گیا تھا ہمیشہ اسکے پاس رہتا اسکو کسی بھی کام میں ہاتھ نہ لگانے دیتا آیت بالاج کو ہونقوں کی طرح دیکھتی رہتی وہ کیوں ایسا کررہا تھا وہ ہمیشہ یہی سمجھتی بالاج اس پر ترس پر کھا رہا ہے لیکن وہ ترس کی تو بھوکی نہ تھی بالاج کو اس طرح دیکھ اسکو اسطرح دیکھ چڑ ہونے لگی تھی آیت کمرے میں گپ اندھیرا کیے بالاج کے بارے میں سوچ ہی رہی تھی جب اسکی آواز کمرے میں گونجی


بالاج آیت کے پاس ٹرے رکھتے ہوئے بولامیرا دل نہیں ہےآیت رخ موڑتے ہوئے بولی کیوں کدھر ہے دل بالاج آیت کی طرف دیکھتے ہوئے بولابالاج کی بات پر آیت نے فورا اس کی طرف دیکھا تھابالاج نے نظریں پھیری تھی کھانا کھائوبالاج نرمی سے بولا تھا کہا نا بھوک نہیں آیت غصے سے بولی تھی وہ کھڑی ہی ہوئی تھی جب بالاج نے آیت کا ہاتھ پکڑ لیامیں نے کہا کھانا کھائوبالاج برف جیسا تاثر لیے غرایا تھاآیت ڈر سے آرام آرام سے نوالے لینے لگی آیت کو کھانا دیکھ بالاج پرسکون ہوا تھاہایے بے بی وہ آیت کو دیکھ ہی رہا تھا جب تانیہ روم میں داخل ہوئی



تم یہاں

ناصر تانیہ کو حیرانگی سے دیکھنے لگا ہاں کتنے دن ہو گئے ہے میں تم سے ملی نہیں اس لیے آ گئی۔تانیہ اب باقاعدہ بالاج کو گلے لگاتے ہوئے بولی تانیہ اور بالاج کو یوں دیکھ آیت کی آنکھیںسرخ ہوئی تھی اچھا کیا میں بھی تمھیں بہت مس کررہا تھابالاج نرمی سے بولا تھا تانیہ فتح کی مسکراہٹ لیے آیت کی طرف دیکھنے لگی بالاج نے آیت کی طرف دیکھا جس کے آنسو نکلنے کے لیے بے تاب تھےتم نے کھانا نہیں کھایا بالاج آیت کے پاس بیٹھتے ہوئے بولامیں کھا چکی آیت منہ پھیرتے ہوئے بولیتانیہ تم دو منٹ ویٹ کرو میں آتا ہوں وہ تانیہ کی طرف رخ موڑے بولامیں یہاں بھی ویٹ کرسکتی ہوں بے بی محبت بھرے لہجے میں تانیہ بالاج کو بولی میں نے کہا نا نیچے ویٹ کروبالاج اب کی بار تھوڑا غصے سے تانیہ سے بولا تھا ٹھیک ہے۔وہ غصے سے بولتی دروازہ زور سے بند کرتی باہر نکل گئی


بالاج اب آیت کی طرف متوجہ ہواآپ جائے وہ ویٹ کررہی ہےآیت غصے سے بولی تم کھانا کھائو پہلےبالاج غرایا تھاآپ کو کیا فرق پڑتا ہے میں کھائوں یا نہ کھائوں آیت روتے ہوئے بالاج کو دیکھتی بولی مجھے فرق پڑتا ہے اگر تم کھائو گی نہیں تو میرا بچہ ہیلدی کیسے ہو گابالاج آنکھیں دکھاتے ہوئے بولا تھااو ہو تو آپ کو بچے کی فکر ہے تب ہی میں بولوب اتنا مہرباں کیوں ہورہے ہےآیت کی آنکھوں سے لڑیوں کی طرح آنسو گررہے تھےہاں تو میرا بچہ ہے اسی کی فکر کرون گا نا وہ طنزیہ لہجے میں بولا تھا


یہ آپکا بچہ نہیں میرا بچہ ہےآیت غصے سے بولی یہ تو وہ بات ہو گی محنت میری اور مزدوری کوئی دوسرا لے جائےلہجہ ہنوز طنزیہ تھاجائے آپ ییاں سےوہ رخ مورتی بولی یہ دوائی لودھاڑ اتنی سخت تھی اسنے جلدی سے دوائی پکڑی منہ میں ڈال لی اپنے ڈر کو قابو رکھتے ہوئے وہ پھر سے اپنے چہرے پر مسکراہٹ لائی اب مسکرا کیوں رہی ہوناصر کو اسکا مسکرانا زہر لگ رہا تھا دل کررہا تھا اٹھا کر کمرے سے باہر پھینک دوں ناصر کی بات پر وہ اور کھل کر ہنسنے لگی(اصل میں یہ زویا کی عادت تھی وہ اپنے ڈر کو چھپانے کے لیے کھل کے ہنستی تھی)


میں نے کوئی جول سنایا ہے یا میرے منہ پر کوئی جوک لکھا ہےوہ پاگلوں کی طرح مسکرا رہی تھی نب ناصر غصے سے بولاآپ کو لڑکیوں سے بات کرنے کی تمیز نہیں زویا منہ کے زاویے بناتے ہوئے بولی تھی تم سے مطلب ناصر ابرو اچکاتے ہوئے بولابیوی ہوں آپکی زویا ایک ادا سے بولی تھی پر میں تمھیں اپنی بیوی  نہیں مانتا وہ غصے سے پھنکارا تھاٹھیک ہے پھر مجھے طلاق دےزویا تو غصے سے آگ بگولہ ہو گئی تھی اور غصے سے بولیکیا کہا تم نےناصر غصے سے زویا کی طرف دیکھتے ہوئے بولا


مزید پڑھیں: قست نمبر

طلاق چاہیے مجھےزویا بھی غصے سے پھنکاری تھی اور تب ہی ناصر کا ہاتھ اٹھا تھا زویا کے روئی جیسی گل پرزویا بے یقینی سے ناصر کو دیکھنے لگی تمھاری ہمت کیسے ہوئی ایسے الفاظ اپنے میں لانے کی وہ غصے سے اسکی ٹھوڑی دبوچتے ہوئے بولاہاں جب آپ مجھے حق نہیں دے سکتے بیوی کا آپ مجھ سے محبت نہین کرتے میں ایسے شخص کے ساتھ پوری زندگی گزار کر کیا کروں زویا کی آنکھوں سے لڑیوں کی مانند آنسو گرنے لگےوہ غصے سے اسکا ہاتھ جھٹکتی جیسے ہی باہر نکلنے لگی ناصر نے جلدی سے اسکا ہاتھ پکڑ لیا چ ۔۔ھ ۔۔۔وڑی۔۔۔ں    چھوڑے مجھےزویا غصے سے بولی تھی 


آج میں تمھیں بتاتا ہوں حق لینا کسے کہتے ہے بہت شوق ہے ناوہ جو روتے ہوئے ہچکیوں کے دوران اسے بامشکل ہاتھ چھڑوارہی تھی ناصر کے ایکدم بازو دبوچ کر اپنے قریب کرنے پر دبی چینخ برآمد ہوئی تھی اس کے منہ سے مقابل کی قربت جان لینے کو ہو گئی خوف اس قدر غالب آ گیا تھا چہرہ یوں سفید ہوا تھا جیسے اند خون ہی نہ ہوجان بوجھ کر آتی ہو نا سامنے میرے  اور اتنا تیار تاکہ میں تمھاری طرف مائل ہو سکوں اس کے بازو پر گرفت سخت ترین کرتا وہ دانت پیس کر بولا تھا آخر میں اس کے بازو کو جھٹکا دے کر پوچھنے لگا میرے دل میں گرم نوشہ پیدا کرنے کی کوشش کررہی ہو یہ دل صرف ہانیہ کے لے دھڑکتا ناصر یزدانی ہانیہ سے محبت کرتا تھا کرتا ہے اور کرتا رہے گا شرم نہیں آتی اپنی بہن کی جگہ لیتے ہوئے اپنا آپا پیش کرتے ہوئے


ناصر

اسکی بات کاٹتا وہ مزید بولا مقابل کے زہریلے لفظوں کو بمشکل سنتی لفظ پیش کرنا سن کر تڑپ ہی گئی تبھی چینخ پڑی مقابل جلد ہی احساس ہوا کہ وہ غلط کر گئی جب ناصر غصے میں اسکی ٹھوڑی پکڑا ہاتھ سےتمیز تو تمھیں نہیں ہےزویا کی ٹھوڑی پر گرفت مضبوط کرتا وہ غرایا وہ اسکو غصے سے بیڈ پر پھینکتا غصے سے دیکھنے لگا


نہیں پلییز

اپنے لبوں پر جھکتے ناصر کو وہ روتی ہوئی بولی تھی یہ آپ کیا کررہے ہےاس بار رونے کے ساتھ ساتھ زویا کو غصہ آیا تھا وہ یہ تو نہیں چاہتی تھی جب وہ اسکی بہن سے محبت کرتا ہے تو کیوں زبردستی کررہا ہے  تبھی بھرائی آواز میں زچ ہو کر بولی تمھارا حق تمھیں دے رہا ہوں کہتے ہی ناصر اسکی گردن پر جھکا ہلکی بڑھی شیف کی چبھن سمیت اسکا لمس اپنی گردن پر محسوس کرتے ہوئے زویا کو منتشر ہوئی دھڑکنیں اپنے کانوں میں سنائی دی دل جیسے سینہ توڑ کر باہر آنے لگا ہو دھڑکنوں نے ایک سو بیس کی سپیڈ پکڑ لی تھی تبھی وہ زور لگاتی اس کو دھکا دیتی واشروم میں بھاگ گئی یہ میں کیا کررہا تھاناصر کو جیسے ہوش آیا تھا وہ غصے سے روم سے باہر نکل گیا